Signout

اسد کھرل

سینئر اینکر پرسن

اسد کھرل کو پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا میں تحقیقاتی نیوز کا ایک وسیع تجربہ حاصل ہے۔وہ 6 کتابوں کے مصنف ہیں اور عالمی جریدے دی گارڈین اور شکاگو سن ٹائمز میں بھی تحقیقاتی کالمز لکھتے ہیں۔ وہ ملک کے نامور ٹی وی چینلز کے مختلف ٹاک شوز میں بھی باقاعدگی سے شرکت کرتے رہے ہیں۔

اسد کھرل، تحقیقاتی صحافت میں پاکستان کا نمبر ون نام

اسد کھرل کو پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا میں تحقیقاتی نیوز کا ایک وسیع تجربہ حاصل ہے۔وہ 6 کتابوں کے مصنف ہیں اور عالمی جریدے دی گارڈین اور شکاگو سن ٹائمز میں بھی تحقیقاتی کالمز لکھتے ہیں۔ وہ ملک کے نامور ٹی وی چینلز کے مختلف ٹاک شوز میں بھی باقاعدگی سے شرکت کرتے رہے ہیں۔

اسد کھرل نے 2003ء میں ' بہترین تحقیقاتی صحافی' کا سالانہ ایوارڈ اپنے نام کیا ۔اس کے علاوہ عدلیہ اور امن و امان سے متعلق رپورٹنگ پر 2 اعزازات بھی حاصل کئے ہیں۔ صرف یہی نہیں،بریکنگ نیوز کو بہترین انداز میں پیش کرنے پر اسد کھرل Illinois Associated Press Editors Association - IAPEA کا ایوارڈ بھی وصول کرچکے ہیں۔اُن کی تمام تر توجہ ملک کے میگا پراجیکٹس میں کرپشن ،اتھارٹی کے غلط استعمال ،عسکریت پسندی اور دہشت گردی سمیت دیگر موضوعات پر ہے ۔اُن کے قلم کی طاقت اورخداداد صلاحیتوں کا اندازہ اِس بات سے بخوبی لگایا جاسکتا ہے کہ پاکستان کی سب سے بڑی عدالت سپریم کورٹ نے اسد کھرل کی تحقیقاتی رپورٹس کو بنیاد بنا کر کئی حساس معاملات کا ازخود نوٹس لیا۔ جس میں این آئی سی ایل کا میگا کرپشن کیس اور 70 سے زائد ہائی پروفائل دہشت گردوں سے متعلق معلومات شامل ہیں۔

اسد کھرل نے کئی ہائی پروفائل سوموٹو نوٹس پر سپریم کورٹ کی معاونت بھی کی ہے جس میں ای او بی آئی کا 34 ارب روپے کی خرد برد کا کیس اور نیب کے تحقیقاتی رکن کامران فیصل کی پُراسرار موت کی تحقیقات بھی شامل ہیں۔ملک کی تاریخی کرپشن کو بے نقاب کرنے میں بھی اسد کھرل کا کردار مثالی ہے ، اُن کی قابلیت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ ان کی 1999ء میں لکھی گئی کتاب 'رائیونڈ سازش' کو حالیہ پاناما کیس کی سماعت کے دوران شریف خاندان کیخلاف ایک ثبوت کی طرح پیش کیا گیا۔ جس سے عدالت کو میگا کرپشن کیس کا تاریخی فیصلہ سُنانے میں کافی مدد ملی۔

تمام ویڈیوز

This website is currently in beta phase. If you find an issue, please email us at [email protected]