Advertisement
Advertisement
Advertisement
Advertisement

ٹیکس محصولات کا حجم بڑھانے کا نیا منصوبہ تیار کر لیا گیا

Now Reading:

ٹیکس محصولات کا حجم بڑھانے کا نیا منصوبہ تیار کر لیا گیا
ٹیکس

اسلام آباد: ٹیکس محصولات کا حجم بڑھانے کا نیا منصوبہ تیار کرلیا گیا ہے۔ گزشتہ حکومت کے صدارتی آرڈیننس کے ذریعے 3 بڑے شعبوں کی ٹیکس میں اضافے کا پلان آگے بڑھایا جائے گا۔

ذرائع کے مطابق پرچون، زراعت اور رئیل اسٹیٹ سیکٹرز پر ٹیکس عائد کرنے کا منصوبہ پی ٹی آئی کے دور حکومت سے سرد خانے میں پڑا ہے، پی ڈی ایم کی حکومت اس پلان کو بنیادی ترتیب دے کر نگران حکومت کے لئے نامکمل چھوڑ گئی تھی، تاہم نگران حکومت کے پاس اس منصوبے کو نافذ کرنے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں رہا۔

ذرائع نے بتایا کہ آئی ایم ایف نے نئی منتخب حکومت کے آنے سے پہلے نئے ٹیکسوں کو قانونی شکل دینے پر زور دیا ہے، محصولاتی پلان پر عمل کے لیئے تین شعبوں میں دستاویزی عمل کو فروغ دینے پر کام جاری ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ٹیکسوں کے نفاز کیلئے نگران حکومت دسمبر تک صدارتی آرڈیننس لانے سے ہچکچا رہی ہے، تاہم اس پلان کے خلاف عدالتوں سے رجوع کئے جانے کا خدشہ حکومت کو روک رہا ہے جبکہ صدارتی آرڈیننس چیلنج ہونے سے بچنے کے لئے وسیع تر اتفاق رائے حاصل کرنے کا بھی پلان ہے۔

علاوہ ازیں نئے محصولاتی پلان کے ذریعے حکومت ایف بی آر کا ٹیکس 13ہزار ارب روپے تک بڑھانا چاہتی ہے، اس کے تحت منقولہ اثاثوں پر بھی دولت ٹیکس لگنے کا پلان ہے۔

Advertisement

ذرائع کے مطابق غیر منقولہ املاک پر کیپیٹل گینز ٹیکس کو بڑھانے کا فارمولہ زیر غور ہے۔ ایف بی آر کا ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم بھی نئے شعبوں کے لیئے ٹیکس پلان کا حصہ ہے، تمباکو، چینی، کھاد، سیمنٹ اور دیگر شعبے ان میں شامل ہونے کا امکان ہے جبکہ پرچون فراوشوں کے لئے ٹیکس مانیٹرنگ کا نیا نظام بھی اس پلان کا حصہ ہے۔

ذرائع نے مزید بتایا کہ ٹیکس ریٹرن کو مزید سادہ بنانے کا فارمولہ پہلے ہی ترتیب دیا جاچکا ہے، ودہولڈنگ ٹیکس کی چوری کے خلاف مانیٹرنگ کو وسیع کیا جائے گا جبکہ عدالتی عمل میں پھنسی بڑی ٹیکس رقوم کے لئے خصوصی قانون کا اطلاق بھی ہوسکتا ہے۔

واضح رہے کہ 27 ستمبر 2023 کو کابینہ کمیٹی برائے اقتصادی بحالی میں نگران حکومت کی جانب سے اہم تجاویز منظور کی گئی تھیں جس میں بتایا گیا تھا کہ دو سال میں ٹیکس محصولات کو 13 ہزار ارب روپے تک لے جایا جائے گا جبکہ آئندہ دو برسوں میں 5 ہزار 600 ارب روپے کی ٹیکس وصولی ممکن ہے۔

اس کے علاوہ امیروں پر ٹیکسوں میں اضافہ اور اخراجات میں کمی کی جائے گی اور اخراجات میں کمی سے تین ہزار 200 ارب روپے کی بچت ممکن ہے۔

بعدازاں قومی آمدنی میں اضافے کیلئے 14 سرکاری اداروں کی نجکاری فی الفور کی جائے گی اور حکومتی اخراجات میں 10 فیصد کٹوتی کی جائے گی جبکہ توانائی کے شعبے میں بدانتظامی کو اصلاحات کے ذریعے بہتر کیا جائے گا تاہم ذرعی شعبے اور قابل انتقال اثاثہ جات پر ٹیکسوں میں اضافہ کیا جائے گا۔

اگر آپ حالاتِ حاضرہ سے باخبر رہنا چاہتے ہیں تو ہمارےفیس بک پیج https://www.facebook.com/BOLUrduNews/ کو لائک کریں

Advertisement

ٹوئٹر پر ہمیں فولو کریں https://twitter.com/bolnewsurdu01 اور حالات سے باخبر رہیں

پاکستان سمیت دنیا بھر سے خبریں دیکھنے کے لیے ہمارے  کو سبسکرائب کریں   اور بیل آئیکن پر کلک کریں

Advertisement
Advertisement
مزید پڑھیں

Catch all the Business News, Breaking News Event and Latest News Updates on The BOL News


Download The BOL News App to get the Daily News Update & Live News


Advertisement
آرٹیکل کا اختتام
مزید پڑھیں
سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور پنشن سے متعلق بڑی خبر
گاڑی خریدنے کے خواہشمند افراد کیلئے بڑی خوشخبری
وافر مقدار میں چینی دستیاب لیکن فروخت بند ہے، یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن
ایل پی جی صارفین کیلئے بُری خبر آگئی
سیمنٹ کی قیمت میں بڑا اضافہ ہوگیا
چینی کمپنیوں کے اشتراک سے تجارت میں ایک ارب ڈالر کا اضافہ ہو سکتا ہے، عبدالعلیم خان
Advertisement
توجہ کا مرکز میں پاکستان سے مقبول انٹرٹینمنٹ
Advertisement

اگلی خبر