Advertisement
Advertisement
Advertisement
Advertisement

عدت نکاح کیس: بانی پی ٹی آئی اور بشریٰ بی بی کی سزا معطلی کی اپیل پر سماعت ملتوی

Now Reading:

عدت نکاح کیس: بانی پی ٹی آئی اور بشریٰ بی بی کی سزا معطلی کی اپیل پر سماعت ملتوی

عدت نکاح کیس: بانی پی ٹی آئی اور بشریٰ بی بی کی سزا معطلی کی اپیل پر سماعت ملتوی

اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے دوران عدت نکاح کیس میں بانی پی ٹی آئی اور ان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کی سزا معطلی کی درخواست پر سماعت 25 جون تک ملتوی کردی۔

 عدت میں نکاح کیس میں بانی پی ٹی آئی اور بشریٰ بی بی کی سزا معطلی کی درخواست پر سماعت ایڈیشنل سیشن جج افضل مجوکا نے کی۔

بانی پی ٹی آئی کے وکیل سلمان اکرم راجہ، بشریٰ بی بی کے وکیل عثمان گل اور خاور مانیکا کے وکیل زاہد آصف عدالت میں پیش ہوئے، زاہد آصف نے وکالت نامہ جمع کروا دیا۔

پی ٹی آئی رہنما کنول شوزیب، شاندانہ گلزار اور سینئر عون عباس بپر کمرہ عدالت میں موجود ہیں۔

سماعت کے آغاز پر خاور مانیکا کے وکیل زاہد آصف نے کہا کہ میں نے آج وکالت نامہ جمع کروا دیتا ہوں بحث آج نہیں کر سکتا، میرے پاس فائیل نہیں میں آج دلائل نہیں دے سکتا، جس پر جج نے کہا کہ 25 تاریخ کو میں نے مرکزی اپیل پر دلائل سننے ہیں۔

Advertisement

بانی پی ٹی آئی کے وکیل سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ میں آج دلائل دوں گا زاہد آصف نوٹ کر لیں۔

جج افضل مجوکا نے سلمان اکرم راجہ سے مکالمہ کیا کہ میں نے فائیل دیکھی ہوئی ہے آپ دو سوالوں کے جواب دے دیں، مجھے سزا معطلی پر مطمئن کر دیں آپ نے کہا کہ یہ شارٹ سینٹینس ہے۔

دوران سماعت بشریٰ بی بی کے وکیل عثمان گل نے کہا کہ ہم عدالت کی مکمل معاونت کریں گے، میں نے اڈیالہ جیل جانا ہے، سماعت سوموار تک ملتوی کرنی ہے تو میں سوموار کو دلائل دوں گا، آج سلمان اکرم راجہ اپنے دلائل دے رہے ہیں، اس پر جج کا کہنا تھا کہ سوموار کو سماعت کرنا ممکن نہیں ہے، منگل کو سماعت کریں گے۔

بانی پی ٹی آئی کے وکیل سلمان اکرم راجہ کے دلائل

بانی پی ٹی آئی کے وکیل سلمان اکرم راجہ ایڈوکیٹ نے اپنے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ کہا کہ جو اعلیٰ عدلیہ سے بعد میں فیصلہ آیا اس پر عدالت عمل کرے گی، 1985 کی آئینی ترمیم کے بعد صورتحال تبدیل ہوگئی۔

وکیل نے کہا کہ شریعت کورٹ کے دائرہ اختیار میں دیا گیا فیصلہ فائنل اتھارٹی ہے، شریعت کورٹ کے قیام سے پہلے کے فیصلوں کا حوالہ نہیں دیا جاسکتا، یہ نہیں ہوسکتا کہ تقی عثمانی نے فیصلہ لکھا ہے تو اسے سائڈ پر رکھ دیں۔

Advertisement

بانی پی ٹی آئی کے وکیل نے کہا کہ اسلام میں ایک اصول ہے کہ عورت کی ذاتی زندگی میں نہیں جھانکنا، خاتون کے بیان کو حتمی مانا جائے گا، عدت کے 39 دن گزر گئے تو اس کے بعد میں ہم نہیں جھانکیں گے۔

سلمان اکرم راجہ ایڈوکیٹ نے دلائل دیے کہ اعلیٰ عدلیہ کے فیصلے میں عورت کوئی بھی ذمہ داری نہیں ڈالی گئی، اعلیٰ عدلیہ نے سارا قصور پراسیکیوشن پر ڈالا کہ انہوں نے عورت کا بیان نہیں لیا، عدالت نے اس بنیاد پر مقدمہ خارج کردیا تھا کہ عدت کے 39 دن گزر گئے۔

جج افضل مجوکا نے کہا کہ اس عدالت کی جانب سے سپریم کورٹ کا فیصلہ غلط نہیں کہا جا سکتا ہے۔

وکیل نے کہا کہ مسلم فیملی لا میں عدت کا لفظ استعمال نہیں کیا گیا، چیئرمین یونین کونسل کو طلاق کا نوٹس جانے کے بعد 90 دن گزرنے چاہئیں، اس کیس میں ہر کوئی مان رہا کہ طلاق تو بہرحال ہوگئی ہے ، عدت کا تصور شرعی ہے۔

بانی پی ٹی آئی کے وکیل نے کہا کہ فراڈ کون کررہا؟ کس کے ساتھ کررہا؟ دو فریقین موجود ہیں جن میں سے ایک فراڈ ہوگا، اس پر جج افضل مجوکا نے سوال کیا کہ 496 بی میں تو سزا نہیں ہوئی؟

سلمان اکرم راجہ نے بتایا کہ 496 بی ختم کردیا گیا تھا، سزا کی بات نہیں، فردجرم بھی 496بی میں عائد نہیں ہوا، 496بی میں دو گواہان ہونے لازم ہیں جو سامنے نہیں آئے، خاورمانیکا کے مطابق 14 نومبر 2017 میں تین بار تحریری طلاق دی گئی، ہمارے مطابق اپریل 2017 میں بشریٰ بی بی، خاورمانیکا کی طلاق ہوئی، بشریٰ بی بی طلاق کے بعد اپنی والدہ کے گھر چکی گئیں، چار ماہ رہیں، بشریٰ بی بی کو دوران ٹرائل اپنا موقف سامنے نہیں رکھنے دیاگیا۔

Advertisement

وکیل نے دلائل دیے کہ سپریم کورٹ نے 90 دنوں کا شادی سے تعلق ختم کردیا، نوٹس کا جواز ہی نہیں، عدالت نے دیکھنا ہے اسلامی شریعت عدت کے حوالے سے کیا کہتی ہے، شہنشاہ عالمگیر کے دور کے فتوے کو شریعت عدالت نے اپنا حصہ بنایا۔

سلمان اکرم راجہ ایڈوکیٹ نے کہا کہ غیر معمولی صورتحال ہے، اعلیٰ عدلیہ نے ڈائریکشن دی کہ سزا معطل، اپیل پرفیصلہ کرنا ہے، اگر شکایت کنندہ کے الزامات بھی مان لیے جائیں توکیس ثابت نہیں ہوتا، شکایت کنندہ نے بشریٰ بی بی کےخلاف ثبوت بھی پیش نہیں کیے، دو فیصلوں سے ثابت ہوا شریعت عدالت عورت کے حقوق کا تحفظ کرتی ہے، قانون کا مقصد عورت کو سہارا دیناہے۔

بانی پی ٹی آئی کے وکیل نے کہا کہ سزا معطلی کے ساتھ ساتھ اپیل پر بھی معاونت کرنا چاہوں گا، مجھے معلوم ہے آئندہ پندرہ روز میں عدالت نے سزا معطلی، اپیل پر فیصلہ کرنا ہے۔

دوران سماعت وکیل سلمان اکرم راجہ نے مفتی سعید کے انٹرویو کی کاپی بذریعہ یو ایس بی عدالت میں جمع کروا دی اور کہا کہ یکم فروری کو گواہی شروع ہوئی، دو فروری کو ٹرائل کورٹ نے فیصلہ سنادیا۔

جج افضل مجوکا نے دو روز میں ٹرائل مکمل ہونے پر حیرانگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ دو روز میں فیصلہ؟

وکیل نے کہا کہ چودہ چودہ گھنٹے دو روز کھڑے رہے، ٹرائل کورٹ نے کہا آج ہی سب کریں، ٹرائل کورٹ نے کہا گواہ، دلائل، سب آج کریں، فیصلہ سنانا ہے، رات بارہ بجے تک اڈیالہ جیل کھڑے رہے، ٹرائل کورٹ کا اعلان جنگ تھاک ہ 3 فروری کو ہی فیصلہ سنانا ہے۔

Advertisement

 وکیل سلمان اکرم راجہ نے جج افضل مجوکا سے سوال کیا کہ آپ نے کبھی کسی وکیل کو کہا ہے کہ رات گیارہ بجے دلائل دیں؟ خاورمانیکا نے کہا بشریٰ بی بی دنیا کی سب سے شریف خاتون ہیں، خاورمانیکا نے کہا جب بانی پی ٹی آئی کا زندگی میں عمل دخل نہیں تھا تب تک بشریٰ بی بی شریف خاتون تھیں۔

وکیل کا کہنا تھا کہ مفتی سعید کا جھوٹ عدالت کے سامنے لانا چاہتا ہوں، مفتی سعید کے لیے میرے پاس جھوٹ کے لیے اور کوئی شائستہ لفظ نہیں، خاورمانیکا سے قبل ہوا میں سے کہیں نمودار ہونے والے محمد حنیف نامی شہری نے شکایت دائر کی، محمدحنیف کی شکایت میں وہی گواہان موجود تھے جو خاورمانیکا کی شکایت میں تھے۔

 سلمان اکرم راجہ ایڈوکیٹ نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ عون چوہدری شکایات کے کرتا دھرتا ہیں، تمام گواہان کو عون چوہدری جمع کرتے، عون چوہدری کو استحکام نامی پارٹی سے بدلے میں ٹکٹ نوازا گیا۔

سماعت کے دوران بانی پی ٹی آئی کے وکیل نے خاورمانیکا کے ملازم اور گواہ محمد لطیف کا بیان عدالت میں پڑھا۔

جج افضل مجوکا نے استفسار کیا کہ خاورمانیکا کو کب معلوم ہوا کہ بشریٰ بی بی اور بانی پی ٹی آئی کا نکاح ہوا؟ جس پر خاور مانیکا کے وکیل زاہد آصف نے کہا کہ میں پوچھ کر عدالت کو آگاہ کردوں گا۔

سلمان اکرم راجا نے بتایا کہ کوئی ثبوت نہیں کہ فراڈ نکاح کیا گیا ہے، جج نے ریمارکس دیے کہ 27 جون سے پہلے سزا معطلی کی درخواست پر فیصلہ کرنا ہے، کوئی فریق اگر نا بھی آیا تو ریکارڈ دیکھ کر فیصلہ کر دوں گا، ابھی 25 جون کے لیے کیس رکھ رہا ہوں۔

Advertisement

بعد ازاں عدالت نے سزا معطلی کی اپیل پر سماعت 25 جون تک ملتوی کردی۔

Advertisement
Advertisement
مزید پڑھیں

Catch all the Business News, Breaking News Event and Latest News Updates on The BOL News


Download The BOL News App to get the Daily News Update & Live News


Advertisement
آرٹیکل کا اختتام
مزید پڑھیں
میں چاہتا ہوں ایسا آرڈر دوں کہ کسی کو برا نہ لگے، چیف جسٹس عامر فاروق
نئے آنے والے وکلاء عدالتی اخلاقیات نہیں سمجھتے، چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ
جسٹس عالیہ نیلم نے لاہور ہائیکورٹ کی پہلی خاتون چیف جسٹس کا حلف اٹھالیا
190 ملین پاؤنڈ کیس: بانی پی ٹی آئی کی موجودگی میں پرویز خٹک کا بیان ریکارڈ
انصاف کے تقاضوں کو پورا کرنے کیلئے چیف جسٹس میرے کیسز پر سماعت نہ کریں، بانی پی ٹی آئی
مخصوص نشستوں کا کیس: ن لیگ کی تحریری معروضات سپریم کورٹ میں جمع
Advertisement
توجہ کا مرکز میں پاکستان سے مقبول انٹرٹینمنٹ
Advertisement

اگلی خبر