Advertisement
Advertisement
Advertisement
Advertisement

عدلیہ میں اسٹیبلشمنٹ کی دخل اندازی کا جلد اختتام ہوگا، چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

Now Reading:

عدلیہ میں اسٹیبلشمنٹ کی دخل اندازی کا جلد اختتام ہوگا، چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ
جسٹس لاہور ہائیکورٹ

عدلیہ میں اسٹیبلشمنٹ کی دخل اندازی کا جلد اختتام ہوگا، چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

راولپنڈی: لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس ملک شہزاد احمد خان نے کہا ہے کہ عدلیہ میں اسٹیبلشمنٹ کی دخل اندازی کا جلد اختتام ہوگا۔

چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ جسٹس ملک شہزاد احمد نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں خطوط اور شکایات آتی ہیں، ایک جج نے لکھا وہ کسی اقدام سے نہیں لڑے، ایک جج نے کہا میں ہر قربانی دینے کو تیار ہوں، اس طرح کی بہت سی شکایات آتی ہیں۔

انہوں نے کہاکہ میں کسی سے بھی ناانصافی نہیں کروں گا، کسی سے بھی ڈر نہیں ہونا چاہیے۔

ملک شہزاد احمد نے کہا کہ ادارے عدلیہ میں دخل اندازی میں ملوث ہیں، ان اداروں کا نام لینا قصور نہیں ہے، جلد عدلیہ میں اسٹیبلشمنٹ کی دخل اندازی کا اختتام ہوگا، ان لوگوں کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کرکام کرنا ہے۔

انکا کہنا تھا کہ یہ مسئلہ ملک کی بدقسمتی ہے، خوشی ہے ہماری عدلیہ اپنا کام کررہی ہے۔

Advertisement

چیف جسٹس نے کہا کہ میری رائے میں یہ نظام کمزور شخص کے لیے بنایا گیا ہے، ہم نے فیصلہ آئین اور قانون کے مطابق کرنا ہوتا ہے، مقدمات میں تاخیر پڑنے کا سبب گواہان کا نہ آنا ہوتا ہے، مقدمات میں ان افراد کا نام ہوتا ہے جو بیرون ملک ہوتے ہیں۔

ملک شہزاد احمد نے مزید کہا کہ میں آپ سب کے لئے دعاگو ہوں اور وکلاء کا مشکور ہوں، چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ فرائض سر انجام دینے کا تین ماہ کا عرصہ ملا، عہدے آنی جانی چیزیں ہیں اپنا کردار ادا کریں۔

واضح رہے کہ اس سے قبل چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ شہزاد احمد خان نے راولپنڈی جوڈیشل کمپلیکس میں ای کورٹ کا افتتاح کیا، چیف جسٹس کی جوڈیشل کمپلیکس آمد کے موقع پر انہیں گاڈ آف آنر پیش کیا گیا۔

 لاہور ہائی کورٹ راولپنڈی بینچ کے معزز ججز ماتحت عدلیہ کے معزز ججز بھی ان کے ہمراہ موجود تھے۔

Advertisement
Advertisement
مزید پڑھیں

Catch all the Business News, Breaking News Event and Latest News Updates on The BOL News


Download The BOL News App to get the Daily News Update & Live News


Advertisement
آرٹیکل کا اختتام
مزید پڑھیں
جلاؤ گھیراؤ کیس: عمر ایوب اور اسد عمر کی حاضری معافی درخواست منظور
ایک جلسہ کرنا ہے تو اُس میں کیا غلط ہے؟ اسلام آباد ہائیکورٹ
سندھ ہائیکورٹ؛ کے الیکٹرک کے بعد نیپرا کو بھی جواب جمع کروانے کی ہدایت
پی ٹی آئی کوآرڈینیٹر احمد وقاص جنجوعہ کا 7 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور
’’نظرِثانی کا حق آئین نےدیا، ججزکے آرام اورآسانی کو نہیں آئین کوترجیح دینی چاہئے‘‘
مخصوص نشستیں پی ٹی آئی کو دینے کے فیصلے کے خلاف نظرِ ثانی کی اپیل دائر
Advertisement
توجہ کا مرکز میں پاکستان سے مقبول انٹرٹینمنٹ
Advertisement

اگلی خبر