مالیاتی بل 2020 میں 30 ترامیم متعارف


رومیصہ ملکویب ایڈیٹر

30th June, 2020
ترامیم

حکومت نے مالیاتی بل 2020 میں 30 ترامیم متعارف کروائی ہیں ۔

تمام تجاویز میں سے 16 انکم ٹیکس، 10 سیلز ٹیکس اور 4 فیڈرل ایکسائیز ڈیوٹیز سے متعلق ہیں جو یکم جولائی سے مؤثر ہوں گی۔

تاہم سیمنٹ اور سگریٹ پر عائد نظر ثانی شدہ ایکسائیز ڈیوٹی صدر مملکت عارف علوی کی جانب سے منظوری ملنے کے بعد نافذ العمل ہوں گی۔

ایک ایکٹ کے ذریعےحکومت نے 3 اداروں کو ٹیکس استثنیٰ کی فہرست میں شامل کرلیا اور حکومت کے تناظر میں کوئی بھی ان اداروں سے ان کی آمدن کی بابت سوالات نہیں کرے گا۔

مذکورہ ایکٹ کے ذریعے حکومت نے شوکت خانم میموریل ٹرسٹ، سندھ انسٹیٹیوٹ آف یورولوجی اینڈ ٹرانسپلانٹیشن (ایس آئی یو ٹی) اور سوسائٹی برائے ویلفیئر آف ایس آئی یو ٹی اینڈ نیشنل اینڈوومنٹ اسکالرشپ فار ٹیلینٹ کو یہ استثنیٰ دیا۔

شوکت خانم واحد نجی ادارہ ہے جسے یہ استثنیٰ حاصل ہوا کیوںکہ ایس آئی یو ٹی سندھ حکومت کے زیر نگرانی چل رہا ہے۔

ایکٹ کے تحت ہوٹل کے کاروبار سے منسلک ایک مقامی کمپنی کو صنعتی اقدام کی تعریف میں شامل کرلیا گیا اس طرح ہوٹل کے کاروبار میں ہونے والے نقصانات کو یکم جولائی کے بعد 8 سال تک پورا کیا جاسکتا ہے۔

اس کے علاوہ حکومت نے ویلتھ اسٹیٹمنٹ کے اعادے کے لیے پہلے کمشنر سے منظوری لینے کی ترمیم بھی واپس لے لی تاہم کمشنر غلط کام کی صورت میں نظرِ ثانی کو کالعم قرار دے سکتا ہے۔

حکومت نے کیفینیڈ انرجی ڈرنکس کی ریٹیل قیمت پر 25 فیصد فیڈرل ایکسائیز ڈیوٹی واپس لے لی۔

اس ایکٹ کے تحت تمباکو سے بنی امپورٹڈ سیگریٹس یا تمباکو کے متبادل کی ریٹیل قیمت پر 65 فیصد ڈیوٹی ہوگی۔

تمباکو کے سگار، چیروٹ اور سگاریلوز اور تمباکو کے متبادل کے لیے ریٹیل قیمت پر 65 فیصد ڈیوٹی یا 10 ہزار روپے فی کلو ہوگی۔

اس کے علاوہ سیمنٹ پر فیڈرل ایکسائیز ڈیوٹی کو مزید کم کرکے ایک روپے 75 پیسے سے ایک روپے 50 پیسے کردی گئی۔

مالیاتی بل 2020 کے مطابق حکومت نے مقامی سطح پر تیار کردہ ڈبل کیبن کی قیمت کے حساب سے 7.5 فیصد شرح جبکہ درآمد شدہ پر 25 فیصد ایف ای ڈی کی لیوی عائد کردی  ۔