بچوں کی زہنی اور جسمانی پرورش والدین کی اولین ذمہ داری


رومیصہ ملکویب ایڈیٹر

26th September, 2020

 بچے کی زہنی اور جسمانی پرورش والدین کی اولین زمہ داریوں میں سے ایک ہے ، لیکن بعض اوقات محدود وسائل اور مہنگائی قوت خرید میں رکاوت بنتی ہے، جس کے باعث والدین بچے کی نشوونما میں وہ خاطر خواہ کردارادا نہیں کرسکتے ۔

غذائی ماہرین کا کہنا ہے کہ صرف مہنگی غذائيں ہی بچے کی غذائی ضروریات کی تکمیل کرنے کا معیار نہیں ہیں بلکہ ان کو مناسب اور کم خرچ میں بھی متناسب غذا فراہم کی جا سکتی ہے- اس کے لیے والدین کو صرف تھوڑی سے سمجھداری کا ثبوت دینا ہے ۔

  کیلشیم

 کیلشیم بچوں کی ہڈيوں اور دانتوں کی نشونما کے لئے  سب سے اہم جز ہے اور ہر بڑھتی عمر کے بچے کو دن بھر میں 700 سے 1300 ملی گرام کیلشیم کی ضرورت ہوتی ہے جس کا بنیادی ماخذ دودھ اور انڈے کی صورت میں موجود ہوتا ہے- مگر اس کے ساتھ ساتھ بچوں کی کیلشیم کی ضرورت کو ہری سبزیاں اور پھل بھی پورا کر سکتے ہیں-

 فائبر ، بچے کی نشونما کے لئے انتہا ئی ضروری 

بچوں کی نشونما کے لیے اس وجہ سے ضروری ہوتا ہے کہ ایک جانب تو یہ ہاضمے کے عمل کو بہتر بناتا ہے اس کے ساتھ ساتھ فائبر سے بھرپور غذاؤں میں قدرتی طور پر وٹامن ای ، وٹامن سی اور میگنیشیم اور پوٹاشیم بھی موجود ہوتا ہے- اس وجہ سے بچوں کے جسم میں دن بھر میں 14 گرام سے 25 گرام تک فائبر کی ضرورت ہوتی ہے اس کا سب سے بڑا ماخذ گندم کی صورت میں ہے بچوں کو پیٹ بھر کر روٹی کھلانا ان کی صحت کے لیے بہت ضروری ہے-

ذہنی نشوونما کے لئے کاربوہائیڈریٹ 

 دماغ کی کارکردگی کو بہتر بنانے کے لیے کاربوہائیڈریٹ بھی بہت ضروری ہے ، کاربو  ہائیڈریٹ   آلو چاول دلیہ اور دیگر میٹھی چیزوں میں موجود ہوتا ہے اور اور یہ دن بھر میں 20 سے 30 گرام تک ایک بچے کو نشونما کے لیے ضروری ہوتا ہے  ۔

فولاد

 بچوں کے جسم میں خون کی  تیاری اور نئےخلیات کی تیاری کے لیے آئرن یا فولاد غذا کا ایک اہم جز ہے جس کے حصول کے لیے صرف گوشت پر اکتفا کرنا غیر ضروری ہے کیوں کہ اس کا حصول سبزیوں پھلوں اور دالوں سے بھی کیا جا سکتا ہے اور ان کا استعمال اپنے بجٹ کے مطابق کر کے بچے کی غذائی ضروریات کی تکمیل کی جا سکتی ۔

وٹامن

وٹامن بچے کی نشونما پر مختلف اثرات مرتب کرتے ہیں ان وٹامن میں وٹامن بی ، اے ، سی ،ڈی اور ای شامل ہیں جو کہ نہ صرف بچوں کی نشونما کے لیے ضروری ہیں بلکہ ان کا استعمال قوت مدافعت کو بھی بہتر بناتے ہیں- اور ان کا حصول صبح کی دھوپ میں چہل قدمی کرنے سے ، تازہ ہوا میں سانس لینے سے اور موسمی پھلوں اور سبزيوں کے استعمال سے ممکن بنایا جا سکتا ہے۔

 پروٹین ۔

 

 بچے میں خلیات کی تیاری اورمیٹا بولزم کے عمل کو تیز کرنے کے لیے پروٹین سب سے اہم جز ہے جس کا حصول گوشت ، انڈے سے ممکن ہے اس کے ساتھ ساتھ یہ مونگ کی دال ، مٹر ، اور دیگر ہری سبزیوں میں بھی ہوتا ہے۔

 چکنائی 

 چکنائی بچے کی نشوونما کے دوران اس کے گوشت اور پٹھوں کی تیاری میں اہم کردار ادا کرتے ہیں مگر اس کا زیادہ استعمال موٹاپے کا بھی باعث بن سکتا ہے- لہذا والدین فاسٹ  فوڈ سے اجتناب کرائیں کیونکہ بچوں کے جسم میں چکنائی کی ضرورت کو عام طور پر گھر کے پکے کھانوں سے بھی پورا کیا جا سکتا ہے اس کے علاوہ دودھ اور گوشت اس کا ایک اہم ذریعہ ہیں۔

 لہذا بچے کی زہنی نشوونما کے لئے مہنگی نہیں بلکہ متناسب غذا اور زرا سی سمجھداری  کی ضرورت ہے جس سے آپ بچے کی  بہترین نشوونما میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں  اوربچے کی بہترین  نشوونما اسے معاشرے کا بہترین شہری اور انسان  بنانے  مین  مددگار ثابت ہوگی ۔