ذہنی تناؤ کے جلد پر اثرات، مگر اس سےکیسے بچا جائے؟


ثمرا مظہرویب ایڈیٹر

22nd October, 2020

ذہنی تناو اور اس کے جلد پر اثرات عام امر ہے، اگر آپ کو لگتا ہے کہ لاک ڈاؤن کے بعد سے آپ کی جلد متاثر ہوئی ہے تو آپ اکیلی نہیں ہیں۔ موجودہ صورت حال آپ کی ذہنی حالت کے علاوہ آپ کے چہرے کی رنگت پر بھی اثرانداز ہو سکتی ہے۔
ماہر جلد ڈاکٹر کوسٹی نے اس حوالے سے ایک انٹرویو میں بتایا ہے کہ ’ذہنی دباؤ بہت سی شکلوں میں جلد کو متاثر کر سکتا ہے، ذہنی دباؤ کی وجہ سے ہمارا جسم زیادہ کولیسٹرول پیدا کرتا ہے جو دباؤ کا ایک ہارمون ہے اور یہ جلد کے لیے کئی مسائل کی وجہ بن سکتا ہے۔‘
کولیسٹرول بڑھنے سے جسم میں صرف تیل کی مقدار ہی نہیں بڑھتی بلکہ سوزش میں بھی اضافہ ہوتا ہے۔
کوسٹی نے بتایا کہ ’ذہنی دباؤ ہمارے مدافعتی نظام میں سوزش یا جلن پیدا کر دیتا ہے تو ایسی صورت میں اگر آپ کو چنبل، ایگزیما یا جلد ورم کا مسئلہ ہے تو وہ انتہائی شدید ہو سکتا ہے۔‘
اس طرح ذہنی دباؤ جلد پر براہ راست اثرانداز ہوتا ہے اور عمر بڑھنے کے قدرتی اثرات بھی اس کی زد میں آتے ہیں جس کی وجہ سے وقت سے قبل جھریاں نمودار ہوتی ہیں۔
ذہنی دباؤ کی وجہ سے جلد پر پڑنے والے اثرات سے بچنے کے لیے ڈاکٹر تجویز کرتی ہیں کہ اپنے معمول کو کچھ اس طرح سے آگے بڑھایا جائے کہ جلد کو نقصان پہنچے کا اندیشہ نہ رہے۔
اپنی جلد کو باقاعدگی سے صاف کریں، ضروری ہے کہ اپنی جلد کی مناسبت سے موئسچرائزر بھی استعمال کریں۔
کوسٹی نے ورزش کی اہمیت پر بھی زور دیتے ہوئے کہا کہ چست رہ کر اور پسینہ بہا کر آپ جسم میں پیدا ہونے والی منفی چیزوں سے بچ سکتے ہیں اور آپ کے خون کا بہاؤ بھی بہتر رہتا ہے، اس سے نہ صرف ذہنی دباؤ کم ہوتا ہے بلکہ مجموعی طور پر صحت پر بھی خوشگوار اثرات مرتب ہوتے ہیں۔
انہوں نے یہ بھی کہا  کہ اس دوران اپنی خوراک کے حوالے سے ضروری باتوں کو بھی نہیں بھلانا چاہیے۔
اس لیے زیادہ پانی پیئیں، کیفین کی مقدار کم کریں اور موسمی سبزیاں اور پھل کھائیں۔