Advertisement
Advertisement
Advertisement
Advertisement

سیل کی گئی والٹن ٹوبیکو کمپنی کو فوری طور پر کھولنے کا مطالبہ

Now Reading:

سیل کی گئی والٹن ٹوبیکو کمپنی کو فوری طور پر کھولنے کا مطالبہ
سیل کی گئی والٹن ٹوبیکو کمپنی کو فوری طور پر کھولنے کا مطالبہ

سیل کی گئی والٹن ٹوبیکو کمپنی کو فوری طور پر کھولنے کا مطالبہ

میرپور: والٹن ٹوبیکو کمپنی کے ملازمین نے آزاد کشمیر حکومت سے کمپنی کو فوری طور پر کھولنے کا مطالبہ کردیا۔

والٹن ٹوبیکو سگریٹ کمپنی کے کارکنوں نے حکومت کشمیر سے مطالبہ کیا ہے کہ عید سے پہلے کمپنی کو غیر قانونی طور پر سیل کیا گیا ہے جس سے 400 سے زائد ملازمین بے روزگار ہوگے ہیں لہذا کمپنی کو فی الفور کھولا جائے۔

والٹن ٹوبیکو کمپنی کے ترجمان عارف ضیا، محمد علی اور عمر احمد نے کشمیر پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ہم سب سے زیادہ ریاست کشمیر کو ٹیکس دے رہے ہیں جو  ماہانہ 24 کروڑ اور سالانہ اربوں میں ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہماری فیکٹریوں پر غیر قانونی طور پر چھاپے مارے گئے اور سیل کئے گئے اور انتظامیہ کی طرف سے سنگین نتائج کی دھمکیاں مل رہی ہیں جب کہ ہم گزشتہ اکتیس سال سے یہاں کاروبار کر رہے ہیں اور باقاعدہ ٹیکس گزار ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومت پہلے بازاروں سے غیرقانونی طور پر فروخت ہونے والی سگریٹ تو پکڑے، پم ٹیکسز ادا کرکے کاروبار کر رہے ہیں۔

Advertisement

انہوں نے یہ بھی کہا کہ کوئی قانون نہ ضابطہ، چھاپہ مار کر فوری سب کاروبار بند کر دیا گیا ہے ہمارے پاس تمام ریکارڈ ہوتا ہے خام مال پر کسی قسم کا ٹیکس لاگو نہیں ہوتا جب کہ اس سلسلے میں محکمہ اِنکم ٹیکس کی فائنڈنگ بھی موجود ہے پورے ملک میں اسمگلگ سگریٹ سرعام بک رہے ہیں جن پر ہاتھ نہیں رکھ سکتی مگر جو ہم ٹیکس گزار ہیں ان کے ساتھ اوچھے ہتھکنڈے آزمائے جارہے ہیں۔

ترجمان کے مطابق سالانہ اربوں روپے ٹیکس دینے والی کمپنی کو کوئی شوکاز جاری نہیں ہوا جب کہ محکمہ اِنکم ٹیکس آڈٹ بھی کرسکتا ہے مگر وہ بھی نہیں کیا گیا خام مال سے سگریٹ بنیں گے تو ہی ٹیکس دیں گے نا سینئر وزیر کی لاعلمی پر افسوس ہے۔

کمپنی کا کہنا ہے کہ یہ سیدھا سیدھا بھتہ کیس ہے جس میں ہمیں مجبور کیا جا رہا ہے کہ ہم بھتہ دیں گے تو ہی کاروبار کرسکیں گے وگرنہ کاروباروں پر تالے لگیں گے۔ حکومت آزاد جموں و کشمیر نے اپنی گرتی ہوئی ساکھ کو بچانے کے لیے یہ ڈرامہ رچایا ہے تمام دفاتر سیل کر دئیے ہیں اگر ایسے ہی روش برقرار رکھی گئی تو ہم اپنے کاروبار یہاں سے سمیٹنے پر مجبور ہوں گے۔

ترجمان کہتے ہیں کہ بھتہ خوری کبھی نہیں دیں گے ہم ریاست کو ٹیکس کی مد پر دیں گے کسی کی جیب نہیں بھریں گے، انتظامیہ نے ہمیں سنگیں نتائج کی دھمکیاں دی ہیں یہ بھتہ کلیکشن آپریشن تھا جس میں کسی کے پاس کوئی ثبوت نہیں ہے کہ ہے کہ کہاں ٹیکس چوری ہو رہا ہے اورکون مال چوری بیچ رہا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ جو ٹرک ضبط کئے گئے وہ پولیس نے راستے سے پکڑے ہیں ایکسائز چیک پوسٹ پر سے اگر بغیر انوائس کے گزرتے تو ہم قصور وار تھے اور خام مال ٹیکس لگ ہی نہیں سکتا، کہا جاتا ہے کہ دو سو ٹرک جاتے ہیں مگر وہ اس کا ثبوت نہیں دے سکتے کہ کہاں اور کب جاتے ہیں۔

Advertisement
Advertisement
مزید پڑھیں

Catch all the Business News, Breaking News Event and Latest News Updates on The BOL News


Download The BOL News App to get the Daily News Update & Live News


Advertisement
آرٹیکل کا اختتام
مزید پڑھیں
سونے کی قیمت میں اضافہ ہو گیا
پیٹرولیم مصنوعات کے حوالے سے ایک اور تشویشناک خبر آگئی
موبائل فون کی درآمد میں 291 فیصد سے زائد اضافہ
مفت سولر پینل اسکیم؛ آپ اہل ہیں یا نہیں؟ طریقہ کار سامنے آگیا
سولر سسٹم لگوانے کے خواہشمند افراد کیلئے بڑی خوشخبری
سونے کی قیمت میں ایک بار پھر بڑی کمی ہوگئی
Advertisement
توجہ کا مرکز میں پاکستان سے مقبول انٹرٹینمنٹ
Advertisement

اگلی خبر