Advertisement
Advertisement
Advertisement
Advertisement

عوام کیلئے برُی خبر؛ حکومت نے آئی ایم ایف کو اہم یقین دہانیاں کرا دیں

Now Reading:

عوام کیلئے برُی خبر؛ حکومت نے آئی ایم ایف کو اہم یقین دہانیاں کرا دیں
آئی ایم ایف

آئی ایم ایف مشن اور معاشی ٹیم کے درمیان مذاکرات کا فائنل راؤنڈ آج ہوگا

نگران حکومت عوام پر ٹیکسوں کا نیا بوجھ ڈالنے کو تیار ہے، پاکستان نے عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کو 218 ارب روپے کے نئے ٹیکس اقدامات کی یقین دہانی کرا دی ہے۔

 آئی ایم ایف کی جانب سے جاری کردہ دستاویز کے مطابق نگران حکومت نے یقین دہانی کرائی ہے کہ نئے ٹیکس اقدامات سے ہر ماہ 18 ارب روپے کے محصولات اکھٹے ہوں گے۔

دستاویز میں بتایا گیا ہے کہ چینی پر فی کلو پانچ روپے فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی عائد کرنے کی یقین دہانی کرائی گئی ہے جس سے ماہانہ 8 ارب روپے کے اضافی محصولات جمع ہوں گے۔

دستاویز کے مطابق لیدرو ٹیکسٹائل مصنوعات پر جی ایس ٹی کی شرح 15 سے بڑھا کر 18 فیصد کرنے کی یقین دہانی کرائی گئی ہے جس سے ماہانہ 1 ارب روپے کے اضافی محصولات جمع کیے جائیں گے۔

علاوہ ازیں مشینری کی درآمد پر 1 فیصد ایڈوانس انکم ٹیکس سے 2 ارب حاصل کیے جائیں گے، خام مال کی درآمد پر 0.5 فیصد ایڈوانس انکم ٹیکس سے ماہانہ 2 ارب روپے حاصل کیے جائیں گے اور کمرشل درآمد کنندگان پر 1 فیصد ایڈوانس انکم ٹیکس عائد کیا جائے گا۔

Advertisement

 آئی ایم ایف کی دستاویز میں مزید بتایا گیا کہ 1 فیصد اضافی ٹیکس سے ماہانہ 2 ارب روپے کے محصولات اکھٹے کیے جائیں گے جبکہ سپلائی پر بھی 1 فیصد ودہولڈنگ ٹیکس عائد کیا جائے گا۔

دوسری جانب حکومت نے توانائی کے شعبے میں 2 سال میں سبسڈی ختم کرنے کا پلان بنا لیا ہے، گیس سیکٹر کا گردشی قرض کم کرنے کیلئے قیمتوں میں پھر سے بڑا اضافہ کیا جائے گا۔

پاکستان نے آئی ایم ایف کو یقین دہانی کرائی ہے کہ گیس کی قیمتوں میں اضافہ رواں ماہ ہی کیا جائے گا، اوگرا15 فروری تک گیس کی قیمتوں میں ردوبدل کا نوٹیفکیشن جاری کر دے گا۔

پاکستان کا اقدامات پر مبنی آئی ایم ایف سے طے شدہ پلان سامنے آگیا، دستاویز کے مطابق ٹیوب ویلز پر حکومتی سبسڈی آئندہ مالی سال سے ختم کی جائے گی، پنجاب، سندھ اور خیبرپختونخوا میں ٹیوب ویلز پر سبسڈی کا خاتمہ ہوگا۔

دستاویز میں بتایا گیا ہے کہ دوسرے مرحلے میں ٹیوب ویلز پر ایک چوتھائی کراس سبسڈی ختم کرنے کا منصوبہ بنایا گیا جبکہ بلوچستان میں ٹیوب ویلز پر سبسڈی ختم کرنے کے مختلف آپشنز زیر غور ہیں۔

 فرٹیلائزر سیکٹر کو گیس پر دی جانے والی کراس سبسڈی مارچ تک ختم کر دی جائے گی اور ایکسپورٹ سیکٹر کیلئے کراس سبسڈی ختم کرکے نان ایکسپورٹ انڈسٹری کے برابر کی جائے گی۔

Advertisement

اس کے علاوہ مقامی گیس اور درآمدی آر ایل این جی کی قیمتیں برابر کی جائیں گی، ڈسکوز کا انتظامی کنٹرول نجی شعبے کو دیے جائے گا اور نجی شعبے کو کنٹرول دینے کیلئے ٹرانزیکشن ایڈوائزر اپریل تک تعینات کیا جائے گا۔

دستاویز کے مطابق زیادہ نقصان والے 25 سو فیڈرز آزادانہ مانیٹرنگ سسٹم متعارف کرانے کا پلان بنایا گیا ہے، ایک سال میں گیس سیکٹر کا گردشی قرض 421 ارب روپے بڑھا، گیس سیکٹر کا گردشی قرض اضافے سے 2 ہزار 84 ارب روپے ہوگیا۔

دستاویز میں مزید بتایا گیا کہ گیس کی قیمتوں میں ششماہی بنیادوں پر ردوبدل کے فریم ورک کو یقینی بنایا جائے گا، توانائی شعبے میں اصلاحات کیلئے اقدامات پر مبنی پلان پر عملدرآمد کیا جائے گا اور گیس سیکٹر کے گردشی قرض بتدریج کم اور پھر ختم کیا جائے گا۔

Advertisement
Advertisement
مزید پڑھیں

Catch all the Business News, Breaking News Event and Latest News Updates on The BOL News


Download The BOL News App to get the Daily News Update & Live News


Advertisement
آرٹیکل کا اختتام
مزید پڑھیں
گرمی کی تعطیلات میں اضافے کا فیصلہ واپس لیا جائے، صدر آل پاکستان پرائیویٹ اسکولز
فرانس کا پاکستان میں سرمایہ کاری میں دلچسپی کا اظہار
پاک فوج کے خیبرپختونخوا میں قومی ورثوں کی حفاظت کے لئے اقدامات جاری
وزیراعظم کا سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر بیان
وزیر خزانہ کی دورہ چین کے حوالے سے غیر رسمی گفتگو
آئی پی پیز کسی عدالت کو نہیں مانتیں، ڈاکٹر شعیب احمد
Advertisement
توجہ کا مرکز میں پاکستان سے مقبول انٹرٹینمنٹ
Advertisement

اگلی خبر