Advertisement
Advertisement
Advertisement
Advertisement

آئی ایم ایف کا نئے قرض پروگرام میں صوبوں کے اخراجات میں شفافیت کا مطالبہ

Now Reading:

آئی ایم ایف کا نئے قرض پروگرام میں صوبوں کے اخراجات میں شفافیت کا مطالبہ

رئیل اسٹیٹ سیکٹر کو ٹیکس نیٹ میں نہ لانے پر آئی ایم ایف کا اظہار تشویش

اسلام آباد: انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) کنےنئے قرض پروگرام میں صوبوں کے اخراجات میں شفافیت کا مطالبہ کردیا ہے۔

ذرائع خزانہ ڈویژن کے مطابق آئی ایم ایف نے آئندہ مالی سال کے وفاق اور صوبائی بجٹوں کو ڈیجیٹلائز کرنے کی تجویز دی ہے، صوبائی حکومتوں کے ترقیاتی بجٹ کے درست استعمال کیلئے نئی تجاویز تیار ہونگی، بجٹ ڈیجٹلائزیشن کے عمل سے آمدن اور اخراجات میں گیپ کو جلد کنٹرول کیا جا سکے گا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کا صوبائی ٹیکسوں کی وصولی کا کام ایف بی آر کو سونپنے کا مطالبہ بھی کیا ہے، صوبائی ٹیکس اتھارٹیز دیگر امور کے باعث مکمل ٹیکس وصولی نہیں کر پا رہیں، صوبائی حکومتیں زرعی انکم ٹیکس وصولی کیلئے طریقہ کار نہیں بنا سکیں۔

علاوہ ازیں آئی ایم ایف کا زرعی شعبے کو ٹیکس نیٹ میں لانے کا شدید دباؤ ہے، زرعی شعبے کو ٹیکس نیٹ میں لانے سے ٹیکس محاصل میں بڑا اضافہ ہو گا۔

ذرائع خزانہ ڈویژن نے مزید بتایا کہ نئے آئی ایم ایف پروگرام کیلئے تمام صوبائی حکومتیں مکمل تعاون فراہم کرنے کو تیار ہیں، تمام امور پر صوبائی حکومتوں کی مشاورت کے ساتھ نئی تجاویز پر کام کیا جا رہا ہے۔

Advertisement
Advertisement
مزید پڑھیں

Catch all the Business News, Breaking News Event and Latest News Updates on The BOL News


Download The BOL News App to get the Daily News Update & Live News


Advertisement
آرٹیکل کا اختتام
مزید پڑھیں
کراچی میں گرمی بڑھنے کے ساتھ ہی لوڈشیڈنگ میں اضافہ
ملک کے بیشتر علاقوں میں شدید گرمی کا راج برقرار
عالمی مالیاتی فنڈ اور پاکستان نے نئے قرض پروگرام پر اہم پیشرفت کی، آئی ایم ایف مشن چیف
الیکشن کمیشن کا اپنے افسران وملازمین کو 3 اعزازیے کا دینے کا فیصلہ
خیبرپختونخوا کا مالی سال 25-2024 کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا
سی پیک کے دوسرے مرحلے میں سرمایہ کاری کے اہم امور طے کیے جانے کا امکان
Advertisement
توجہ کا مرکز میں پاکستان سے مقبول انٹرٹینمنٹ
Advertisement

اگلی خبر