کرتارپور گوردوارے کے احاطے میں فوٹوشوٹ کرنے پر ماڈل نے معافی مانگ لی

Kamran Sarwar

30th Nov, 2021. 11:44 am
ماڈل

کرتارپور گوردارے کے احاطے میں فوٹو شوٹ کروانے والی ماڈل نے اپنی حرکت پر معافی مانگ لی۔

تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز کرتار پور گوردارے کے احاطے میں خاتون ٹک ٹاکر کی ماڈلنگ اور فوٹو شوٹ کی تصاویر سامنے آئی تھی جس پر انہیں شدید تنقید کا نشانہ بنایا گیا اور اپنی اس حرکت پر معافی مانگنے کا مطالبہ بھی کیا گیا۔

پاکستانی ماڈل صالحہ نے اپنے انسٹاگرام اکاؤنٹ پر’سوری‘ کی تصویر شیئر کرتے ہوئے لکھا ’’ میں نے اپنے اکاؤنٹ پر ایک تصویر اپ لوڈ کی جو کسی فوٹو شوٹ کا حصہ نہیں تھی  بلکہ میں نے سکھ کمیونٹی کے مقدس مقام کرتار پور کا دورہ کیا تھا‘‘۔

ماڈل صالحہ نے مزید لکھا کہ تصاویر اپ لوڈ کرنے کا مقصد کسی کی دل آزاری کرنا نہیں تھا لیکن میری اس حرکت سے اگر کسی کو تکلیف پہنچی تو میں ان تمام لوگوں سے معافی مانگتی ہوں اور میں سکھ ثقافت کی قدر وعزت کرتی ہوں۔

پاکستانی ماڈل نے کہا ’’ میں نے لوگوں کو تصاویر بناتے ہوئے دیکھا تو میں نے اپنی تصاویر بھی بنوالی جب کہ میں نے وہاں موجود سکھ برادری سے تعلق رکھنے والے لوگوں کو بھی تصاویر بنائی‘‘۔

اس سے قبل ڈیزائنر شہریاریوسف نے کہا کہ گوردوارہ دربارصاحب میں کسی برانڈ کا کوئی فوٹوشوٹ نہیں کروایا، ایک خاتون ٹک ٹاکر نے ان کے برانڈ کا ڈریس پہن کر ذاتی حیثیت میں فوٹوگرافی کروائی ہے تاہم سکھ قوم کی دل آزاری اور گوردوارہ صاحب کی بے حرمتی پر معافی مانگتے ہیں۔

گوردوارہ دربارصاحب کرتارپورمیں ٹک ٹاکر خاتون کی ماڈلنگ کے واقع کے بعد ملک بھرمیں موجود سکھوں، ہندوؤں اورمسیحی برادری کے مقدس مقامات میں ٹک ٹاکرکے ویڈیو  اورفوٹوشوٹ پرپابندی لگادی گئی۔

وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے سکھوں کے مذہبی مقام کرتارپور گوردوارہ کے احاطے میں ماڈلنگ کی تصاویر سامنے آنے پر نوٹس لے کر رپورٹ طلب کی تھی۔

دوسری جانب وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری سمیت دیگر وزرا نے اس اقدام کی مذمت کی ہے جب کہ فواد چوہدری نے اپنی ٹوئٹ میں کرتارپور گوردوارے کے احاطے میں ماڈلنگ کروانے والے ڈیزائنر سے معافی مانگنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ کرتارپور کوئی فلم سیٹ نہیں، ایک مذہبی مقام ہے۔

Square Adsence 300X250